نیشنل بنک میں ترقیوں کا معاملہ ڈراونا خواب بن چکا ۔سلیم مانڈوی والا راوالپنڈی میں 270 گاڑیاں ایک شناختی کارڈ پر جو ٹیکس دہندہ نہیں تھا ۔ ایف بی آر

Founder Editor Tazeen Akhtar..

اسلام آبا د۔۔۔ سینیٹ قائمہ کمیٹی خزانہ کا اجلاس چیئرمین کمیٹی سینٹر سلیم مانڈوی والا کی صدارت میں پارلیمنٹ ہاؤس میں منعقد ہوا۔ قائمہ کمیٹی کے اجلاس میں سینیٹر عثمان خان کاکٹر کے سینیٹ اجلاس میں توجہ دلاؤ نوٹس برائے کسٹم انسپکٹر کی 30 پروموشنل سیٹوں ، کمپیٹیشن کمیشن پاکستان کی چیئر پرسن کی تعیناتی ، ٹیکس بیس کے دائرہ کار کو وسیع کرنے کے معاملات کے علاوہ بے نامی ٹرانزکشن کے حوالے سے ایف بی آر کی پرگرس رپورٹ کے معاملات کا تفصیل سے جائزہ لیا گیا ۔

قائمہ کمیٹی کے اجلاس میں مسابقتی کمیشن آف پاکستان کی چیئرپرسن اور ممبرز کی تعیناتی کا معاملہ بھی زیر غور لایا گیا ۔

کمیٹی کو بتایا گیا کہ کیبنٹ نے اپنے اختیارات ز وزیراعظم پاکستان اور وزیر خزانہ کو اس حوالے سے دیے تھے جس پر چیئرمین کمیٹی نے کہا کہ اس طرح نہیں ہو سکتا ۔ وزارت قانون نے بھی اس کی تردید کی ہے ۔ قائمہ کمیٹی نے وزارت قانون سے معاملے کی تفصیلات تحریری طورپر طلب کر لیں ۔ قائمہ کمیٹی کو ڈی جی برائے بی ٹی بی(براڈنگ آف ٹیکس بیس) نے ٹیکس بیس کو بڑھانے کے حوالے سے تفصیلی آگاہ کیا ۔ کمیٹی کو بتایا گیا کہ کراچی لاہور اور اسلام آباد میں براڈننگ آف ٹیکس بیس زونز قائم کردئیے گئے ہیں۔ ہماری توجہ بڑے ویلیو ٹیکس پیئرز پر ہے ۔

ڈی جی بی ٹی بی نے کمیٹی کو بتایا کہ گزشتہ دس سالوں میں بننے والے پلازوں کی میپنگ کر رہے ہیں اوراسلام آباد میں 450 پلازوں کی میپنگ کر چکے ہیں ۔ اس کے بعد ہاوسنگ سکیموں پر توجہ دیں گے۔کمیٹی کو بتایا گیا کہ اسلام آباد ہائیٹس میں 97 کے قریب یونٹس بیچے گئے جس میں 40 خریدار غیر رجسٹرڈتھے اورنشاندہی کرکے 33 ہزار افراد کو نوٹسز جاری کر چکے ہیں۔چار موبائل کمپنیوں نے زیادہ بلنگ والے صارفین کی معلومات دی ہیں صارفین کا ڈیٹا کو اپنے سسٹم کے ساتھ میچ کریں گے ۔تین بی ٹی بی زونز نے دس ہزار غیر رجسٹرڈ افراد کی نشاندہی کی ہے ۔ کمیٹی میں انکشاف کیا گیا کہ راوالپنڈی میں 270 گاڑیاں ایک ایسے شناختی کارڈ پر رجسٹرڈ تھیں جو ٹیکس دہندہ ہیں نہیں تھا ۔ حکام ایف بی آر نے کمیٹی کو بتایا کہ بے نامی ٹرانزیکشن کے حوالے سے سمری کابینہ کمیٹی لیجیسلیشن کو چلی گئی ہے ۔ ہر پندرہ روز بعد اس حوالے سے قائمہ کمیٹی کو رپورٹ دے دیا کریں گے ۔

چیئرمین کمیٹی سینٹر سلیم مانڈوی والا نے کہا کہ نیشنل بنک میں ترقیوں کا معاملہ ایک ڈراونا خواب بن چکا ہے ۔ کل کے ہونے والے اجلاس میں نیشنل بنک سے اس حوالے سے تفصیل بریفنگ حاصل کی جائے گی ۔ لوگوں کی اس حوالے سے بے شمار شکایات ہیں ۔انہوں نے کہا کہ کوئی ممبر نہیں بچا جس کے پاس شکایت نہ آئی ہو ۔کمیٹی کے آج کے اجلاس میں سینیٹرز محمد محسن خان لغاری، عائشہ رضا فاروق ، الیاس احمد بلور، عثمان سیف اللہ خان اور عثمان خان کاکڑ کے علاوہ وزارت خزانہ ، ایف بی آر کے حکام نے شرکت کی ۔