ننی پری اور قاتل لفٹ

Founder Editor Tazeen Akhtar..

محمد جنید عباسی

ہیڈ آف ورڈ سمائل آرکائیو پاکستان  

junaid@jayshaz.com

وہ ننی پری جسکے قہقہے ، مسکراہٹیں، شرارتیں اور معصومانہ  باتیں ہمارے گھر کی رونق تھی۔ ۶ سال کی عمر میں کسی نے یہ سوچا نہ تھا کہ  ہم اسکی معصوم مسکراہٹوں سے ہمیشہ کے لیے محروم ہو جائیں گیئں۔

چند مھینوں سے اسکا دل کھلونوں، بچوں کے ساتھ شرارتوں اور دیگر مشا غل سے بھر چکا تھا شا ہد اسے اب دنیا کھیلوں اور کھلونوں میں خاص دلچسپی نہیں رہی تھی۔ وہ اب جنت کے پھولوں اور باغوں میں کھیلنے جا رہی تھی۔  

۲ جون کی شام  اللہ حافظ کہ کے جانے والی ابیہ اویس اور اسکے خاندان کو معلوم نہ تھا کہ یہ ننی پری در حقیقت خالق حقیقی سے جا ملے گی۔اور پورے خاندان کو ایک ایسا دکھ اور غم دے گی جسے کبھی بھلایا نہ جا سکے گا۔

موت کا زائقہ سب نے چکھنا ہے یہ بات سب نے سنی اور کہی ہو گی مگر جب میری بتیجی، میرے دل کی ٹھنڈک جسے اپنے ہاتھوں کے جھولے میں سلایا جسکی ہر بات ہر شرارت سبکے چہروں پہ خوشی اور مسرت لے آتی تھی۔ اسکی درد ناک اور خوفنات موت کی خبر سنی تو لگا جیسے ساری دنیا ہی ختم ہو گئی جسے قیامت آ گئ ہو اور موت کی دہشت و وہشت چھائی گئی۔یقین نہی آ رہا تھا کہ میری ننی پری جسے پیار سے ٹایئگر کہ  کے بلاتا تھا وہ ایسے چھور کے چلی جائے گی۔

یہ ننی پری لورہ ایبٹ آباد میں میں ایسی قاتل لفٹ سے گر کر کئی سو فٹ گہری کھائی میں جا گری  تھی جسے آپریٹ کرنے والا کم عمر تھا جسکی لا پرواہی اور نا تجربہ کاری نے ننہی ابیہ کی جان لے لی۔ قدرت کا کرشمہ یہ ہوا کہ گرنے والی دو بہنوں میں سے ایک کو اللہ نے ایسا اپنی رحمت اور حفاظت کے سائے میں رکھا کہ اسے محظ چند خراشیں آئیں جبکہ دوسری بہن

اللہ کو پیاری ہو گئی۔

عینی شائد کے مطابق لفٹ کو یہ تسلی کیے بغیر کہ تمام لوگ اور بچے بیٹھ  چکے ہیں چلا دیا گیا جبکہ لفٹ میں صرف دو معصوم پریاں ایمل اور ابیہ ہی بمشکل بیھٹی تھیں اور مسافروں نےاپنے بیٹھ جانے کا کوئی سگنل تک نہ دیا تھا۔

ایبٹ آباد میں دو طرح کی لفٹیں کام کر رہیں ایک وہ جو سیاحتی مقامات پر حکومتی اداروں کی طرف سے اپنی سرپرستی میں لگائی جاتی ہیں اور سیاح اس سے خوبصورت نظاروں سے لطف اندوز ہوتے ہیں۔

مگر یہ دوسری قسم کی لفٹیں جس سے بہت سے لوگ نا اشنا ہیں ایک موت کے جال کے الاوہ کچھ بھی نہیں۔یہ لفٹیں نہ تو حکومتی سرپرستی میں چل رہی ہیں نہ ہی یہ کسی قانون وضابطہ کے ماتحت ہیں۔ان لفٹوں کا استعمال روزانہ سیکڑوں فٹ اونچی کھائی کو کراس کر کے دوسری طرف آنے جانے کے لیے ہوتا ہے ۔

اہل علاقہ اسے اپنی مجبوری بتاتے ہیں انکے مطابق علاقہ میں سڑکوں حالت خستہ اور نہ ہونے کے برار ہے اور دور دراز علاقوں میں جانے کے لیے گاڑیوں کی بھی کمی رہتی ہے جسکی وجہ سے لفٹ کا استعمال کیا جاتا ہے۔

ان خطرناک لفٹوں پر روزانہ سکول کے بچے اور بوڑھے مرد و عورتیں سفر کرتی ہیں۔تشویش کی بات یہ کہ ان لفٹوں پر کسی قسم کے کوئی حفاظتی اقدامات یا ہنگامی صورت حال کے لیے کوئی سہولت میسر نہیں۔

یہاں تک کہ بنیادی سہولیات اور طریقہ کار جو ان لفٹوں کو چلانے کے لیے ضروری ہے جیسے کہ ہنر مند  تجربہ کار ڈرائیور ، دونوں طرف

رابطہ کی سہلولت وغیرہ کا شدید فقدان نظر آتا ہے۔

ایبٹ آباد کے علاقہ لورہ گڑھئی میں ایسی در جنوں لفٹیں کام کر رہی ہیں جنکو نا تجربہ کار اور کم عمر بچے آپریٹ کرہے ہیں

ان لفٹوں کے باعث درجنوں حادثات اور سیکڑوں انسانی جانیں ضائع ہو چکی ہیں۔

 حادثات کے بعد چند دنوں کے لیے لفٹ کو بند کیا جاتا ہے اور پھر لفٹ مالکان او مافیاکے پریشر پر ڈسٹریکٹ ایڈمنسٹریشن کی طرف سے زبانی یقیں دہانی پر چلانے کی اجازت دے دی جاتی ہے۔ ان لفٹوں کو چلانے کا نہ ہی کوئی قانون ہے نہ یہ انہیں کسی ظابطہ کے تحت آپریٹ کی جاتا ہے۔

علاقہ کی پولیس اس سلسلے میں بے بس نظر آتی ہے انکے مطابق ان لفٹوں کو عوامی سہولت اور  انکی رضامندی سے لگایا گیا ہے اور اسکے تمام اختیارات ڈسٹریکٹ اڈمنسٹریشن کے پاس ہیں

پولیٹلیکل اور لوکل انتطامیہ ان تمام حادثات کے باوجود کوئی ایکشن لینے سے قا صر ہے۔شاہد انیہں مزید ننہی پریوں کی لاشوں کا انتظار ہے شائد مزیدپھول جیسی ابیہ کو اپنے جان سے ہاتھ دھونا پڑیں گیئں۔

میں اہل علاقہ اور ابیہ کی اواز بن کرحکومتی اداروں سے یہ اپیل کرتا ہوں کہ فلفور ایبٹ آباد کی تمام قاتل لفٹوں  کوبند کر کے انکو قانون اور ظابطہ کے تابع کیا جائے اور دوبارہ چلانے سے پہلے تما تر قانونی کاروائی کو مکمل کیا جائے ۔ لفٹوں کو اپریٹ کرنے کا طرقہ کار، لائسینس اورمہانہ  تکنیکی جائیزہ بھی یقینی بنایا جائے۔

اس علاقہ میں سڑکوں  کاحال بھی انتہائی برا ہے۔اور سڑکوں کی تعمیر و مرمت ایک سیاسی وعدہ ہے جسے پورا ہونے کاانتظاراہل علاقہ کئی دہایوں سے کر رہے ہیں۔حکومت کو چاہیے کہ ان مسائل کا حل کرے

اور اگر یہ سب ممکن نہیں تو ان قاتل لفٹوں کو ہمیشہ کے لیے بند کیا جائے تاکہ کسی اورکی ابیہ ہستے کھیلتے موت کی اندھیری کھا ئی میں نہ جا گرے۔

 

09 June 2018