ملکہ برطانیہ کی جانب سے بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والی برٹش کونسل کے عملے کی اراکین کے لیے اعزازات

Founder Editor Tazeen Akhtar..

پاکستان کے لیے برطانوی ہائی کمشنر تھامس ڈریو )کمپینین آف دی آرڈر آف سینٹ مائیکل اینڈ سینٹ جارج( نے برٹش کونسل میں خدمات انجام دینے کے دوران بہترین کارکردگی کا مظاہرہ کرنے پر نشاط ریاض اور شازیہ خاور کو ملکہ عالیہ برطانیہ کی جانب سے اعزازات سے نوازہ۔

نشاط اور شازیہ کو 'موسٹ ایکسیلنٹ آرڈر آف دی برٹش ایمپائر (MBE) کی اعزازی رکنیت دی گئی ہے۔  ایم بی ای ایک اہم اعزاز ہے جو افراد کو اہم کامیابیوں یا ان غیر معمولی خدمت جو دیگر افراد کے لیے ایک مثال کی حیثیت رکھتی ہیں' کی انجام دہی کے نتیجے میں دیا جاتا ہے۔

اعزازات کی ایک باوقار تقریب سے خطاب کرتے ہوئے پاکستان کے لیے برطانوی ہائی کمشنر تھامس ڈریو )کمپینین آف دی آرڈر آف سینٹ مائیکل اینڈ سینٹ جارج( نےکہا:

"میرے لیے نشاط ریاض اور شازیہ خاور کو برٹش کونسل میں تعلیم اور ثقافتی تعلقات کے شعبہ میں ان کی انتھک محنت اور پُرجوش کارکردگی  کے اعتراف میں ایم بی ای کی اعزازی رکنیت دینا انتہائی باعث مسرت ہے۔ انہوں نے اپنی بہترین قائدانہ صلاحیتوں کا مظاہرہ کرتے ہوئے برطانیہ اور پاکستان کے تعلیمی اور معاشرتی تعلقات کو جوڑتے ہوئے دونوں ممالک کے ثقافتی روابط کو فروغ دیا ہے۔ ان کا عزم ہم سب کے لئے ایک مثال ہے۔"

برٹش کونسل پاکستان کی سربراہ روزمیری ہل ہورسٹ نے کہا:

"میں نشاط ریاض اور شازیہ خاور کو اعزاز دیے جانے پر مبارک باد پیش کرتی ہوں۔  اپنی غیر معمولی کارکردگی کے باعث یہ اس اعزاز کی حقدار ہیں۔  برٹش کونسل پاکستان کے عملے کے ارکان ان کی خدمات کو تسلیم کیے جانے پر بہت خوش ہیں۔"

Nishat Riaz

اعزازی برٹش ایوارڈز 2016: ایم بی ای

نشاط ریاض MBE
شعبہ تعلیم میں برطایہ اور پاکستان کے ثقافتی تعلقات کے فروغ میں کی جانے والی خدمات

برٹش کونسل کے لیےخدمات:

·         موجودہ ڈائریکٹر ایجوکیشن، برٹش کونسل پاکستان۔ برٹش کونسل میں 15 سال سے خدمات انجام دے رہی ہیں۔

·         اعلی تعلیم، اسکولوں اور تکنیکی مہارتوں کے پروگرام کے شعبوں  میں برطانیہ اور پاکستان کے درمیان مضبوط ادارتی شراکت داری کا فروغ

·         تعلیم کے معیار کو بہتر بنانے کے عزم پر توجہ مرکوز رکھتے ہوئے پاکستان بھر میں وفاقی اور صوبائی تعلیمی اداروں کے ساتھ مسلسل اور مؤثر روابط کا قیام۔

·         پاکستان کے  تعلیمی تناظر کی تزئین کرنے کے لئے جدید پروگرام  کا آغاز کر کے ان کی کامیابی سے تکمیل کی۔ ان میں اسپلٹ سائٹ پی ایچ ڈی اسکیم، وومین لیڈر شپ ان ہائر ایجوکیشن پروگرام،  بچوں کی ابتدائی تعلیم سے منسلک ترقیاتی منصوبے، اسٹیم ٹیچنگ )سائنس ، ٹیکنالوفی، انجنیئرنگ ، میتھمیٹکس( کے معیار کو بہتر بنانے کے لیے منصوبہ بندی،  خصوصی ضروریات والے بچوں کے لیے تعلیم اور سہولتوں سے محروم معاشروں میں تعلیم کے لیے وظائف کی فراہمی کے منصوبے شامل ہیں۔

·         نشاط نے برطانوی اداروں اور تقریباً 2700 پاکستانی تعلیمی اداروں کے درمیان  باہمی شراکت داری کو فروغ دیا۔  ان  منصوبوں میں ہزاروں ماہرینِ تعلیم اور  اساتذہ  شامل ہوئے  جس کے باعث لاکھوں کی تعداد میں نوجوان پاکستانی طلباء  کو فائدہ پہنچا۔

·         ساری دنیا میں انٹرنیشل ایجوکیشن کانفرنس میں برٹش کونسل کی نمائندگی کی۔ بڑی تعداد میں تعلیمی جرائد اور دستاویزات کا اجراء کیا۔

برٹش کونسل کے علاوہ خدمات:

·         آغا خان ڈیویلپمنٹ نیٹ ورک اور ہاشو فائونڈیشن بورڈز کے لیے ڈائریکٹر اور ٹرسٹی۔

·         پاکستان کے لیے پہلی چیوننگ اسکالر 2003۔ یونیورسٹی آف مانچسٹر میں انٹرنیشل ڈیویلپمنٹ میں تعلیم حاصل کی۔

·         گلگت بلتستان سے پہلی خاتون انجنیئر۔  صدر پاکستان کی جانب سے تعلیم میں ایوارڈ برائے حسنِ کارکردگی۔

·         نشاط تین بچوں کی ماں ہیں ۔

Pic 1شازیہ خاور MBE

برطانیہ اور پاکستان کی ثقافتی تعلقات کے لیے خدمات

 

 

 

برٹش کونسل کے لیے

·         موجودہ ریجنل لیڈ آف دی جسٹس، سیکیورٹی، جینڈر، گورنینس اینڈ سوشل انٹرپرائز پورٹفولیو فار برٹش کونسل سائوتھ ایشیا۔ 
برٹش کونسل کے ساتھ 12 سال سے زائد عرصے سے وابستگی۔

·         پاکستان اور برطانیہ کے درمیان مضبوط تعلقات کے فروغ کے لیے دونوں ممالک میں فارمل اور انفارمل تعلیمی شعبے ، سول سوسائٹی کی تنظیموں، پارلیمنٹس  اور مقامی حکومتی اداروں میں کثیر تعداد میں منصوبوں کی سربراہی۔

·         برطانوی ادارہ  برائے بین الاقوامی ترقی، یوروپین یونین ، ایجوکیٹ اے چائلڈ فائونڈیشن  اور فارن اینڈ کامن ویلتھ آفس کے ساتھ وفاقی اور صوبائی اداروں کے مشترکہ کثیر تعداد میں تعلیمی اور  سماجی شعبے کے لیے کثیر تعداد میں منصوبہ بندی اور تکمیل۔

·         ہزاروں نوجوان افراد کا ایک نیٹ ورک  قائم کرنے، برادریوں کی شمولیت کے فروغ اور خواتین اور لڑکیوں کو بااختیار بنانے کے لیے پاکستان میں ایکٹو سٹیزن یوتھ پروگرام کا آغاز۔   اب ایکٹو سٹیزن، ایک عالمی پروگرام بن کر  برطانیہ سمیت 15 ممالک میں چل رہا ہے۔ اس پروگرام نے معاشرتی تبدیلیاں لانے کے لیے ہزاروں نوجوان افراد کو شامل کیا ہے۔  پاکستان میں اس پروگرام کا اہم مقصد نوجوانوں ، خواتین ، لڑکیوں  اور کسی جسمانی معذوری کا شکار افراد کے ساتھ مل کر کام کرنا ہے۔ اس پروگرام کی اہم کامیابی پاکستان کے دور دراز علاقوں میں ڈھائی لاکھ سے زائد بچوں اور بچیوں کا پرائمری اسکول میں داخلہ ہے۔

·         برٹش کونسل پاکستان نیکسٹ جینریشن ریسرچ سیریز کی سربراہی۔  اس پروگرام کی رسائی دنیا بھر میں لاکھوں افراد تک ہوچکی ہے۔

برٹش کونسل کے علاوہ خدمات:

·         شازیہ پاکستان بھر میں 21 چیریٹی ہسپتال چلانے والے المصظفٰی ٹرسٹ کی بورڈ ممبر ہیں۔

·         پاکستان کی پہلی خواتین یونیورسٹی فاطمہ جناح وومین یونیورسٹی  کی علم برداروں میں سے ایک۔

·         اپنے تعلیمی دور میں دو گولڈ میڈل جیتے۔ ان میں سے ایک چانسلر گولڈ میڈل تھا جو کہ صدر پاکستان نے دیا۔

·         شازیہ چار بچوں کی ماں ہیں۔